بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 26 مئی 2019 ء

دارالافتاء

 

جس بھائی بہن کی اولاد نے ایک دوسرے کی والدہ کا دودھ پیا ہو ان کے آپس میں نکاح کا حکم


سوال

ایک بہن اورایک بھائی  ہے، بہن نے اپنےبھائی کے بچوں کو دودھ پلایاہے اور بھائی کی بیوی نے بہن کے بچوں کو دودھ پلایاہے، اب بھائی اپنے بیٹے کے لیے بہن کی بیٹی کا رشتہ مانگتاہے، اب برائےمہربانی اس مسئلے کی وضا حت فر مادیں!

جواب

مذکورہ بھائی اپنے جس بیٹے کے لیے  اپنی بہن کی بیٹی کا رشتہ مانگ رہا ہے اگر اس بیٹے نے  اپنی اس پھوپھی کا دودھ پیا ہے یا مذکورہ بہن کی جس بیٹی کا رشتہ مانگا جارہا ہے اس نے اس لڑکے کی والدہ  کا دودھ پیا ہو تو یہ نکاح جائز نہیں ہے؛ کیوں کہ دونوں رضاعی بہن بھائی ہیں،  البتہ اگر نہ تو  لڑکے نے اپنی پھوپھی کا دودھ پیا ہو اور نہ ہی لڑکی نے اپنی ممانی کا دودھ پیا ہو تو اس صورت میں ان دونوں کا نکاح جائز ہوگا۔

الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (3/ 217):

"(وتحل أخت أخيه رضاعاً) يصح اتصاله بالمضاف كأن يكون له أخ نسبي له أخت رضاعية، وبالمضاف إليه كأن يكون لأخيه رضاعاً أخت نسباً وبهما وهو ظاهر".فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144004201033

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن


تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں