بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

17 ذو الحجة 1440ھ- 19 اگست 2019 ء

دارالافتاء

 

تجدیدِ نکاح کا طریقہ


سوال

اگر نکاح نہ ٹوٹا ہو اور احتیاطاً تجدیدِ نکاح کرنا ہو تو اس کا طریقہ بتا دیں، اور اگر کسی وجہ سے نکاح ٹوٹ گیا ہو تجدید نکاح کرنا ہو تو اس کا طریقہ بھی ارشاد فرمادیں!

جواب

تجدیدِ نکاح کا طریقہ یہ ہے کہ خطبہ نکاح پڑھنے کے بعددو مسلمان عاقل بالغ مردوں یا ایک مرد اور دو عورتوں کی موجودگی میں نئے مہر کے ساتھ ایجاب و قبول کیا جائے، احتیاطاً تجدید نکاح کیا جائے یا نکاح ٹوٹ جانے کے بعد  نکاح کیا جائے دونوں کا ایک ہی طریقہ ہے، البتہ جو نکاح بطورِاحتیاط کیا جائے اس میں نیامہر مقررکرنا شرط نہیں ہے۔تجدیدِ نکاح کے وقت خطبے کی فضیلت بھی حاصل کرنی چاہیے مگر نکاح اس کے بغیر بھی درست ہے۔فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 143909200481

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئے