بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 26 مئی 2019 ء

دارالافتاء

 

بیوی کے انتقال کے بعد مہر کے سونے کا حکم


سوال

شادی کے بعد حقِ مہر میں جو سونا دیا جاتا ہے وہ بیوی کی ملکیت میں ہوتا ہے، لیکن چوں کہ عورت کوئی نوکری وغیرہ نہیں  کرتی؛ اس لیے اس زیور پر جو زکاۃ ہوتی ہے وہ بیوی کی طرف سے شوہر ادا کرتے ہیں، پوچھنا یہ ہے کہ اگر کسی کی بیوی کا انتقال ہو جائے تو پھر اس زیور کا کیا حکم ہے جب کہ بیوی کی طرف سے کوئی وصیت بھی نہ کی گئی ہو؟

جواب

حقِ مہر کے طور پر جو زیور بیوی کو ملے وہ بیوی کی ملکیت ہوتاہے؛ اس لیے بیوی کے انتقال کے بعد وہ زیور بیوی کا ترکہ شمار ہوگا، اور میراث کےضابطہ شرعیہ کے موافق مرحومہ کے شرعی ورثاء کے درمیان تقسیم ہوگا۔فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 143909202279

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن


تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں