بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 26 مئی 2019 ء

دارالافتاء

 

بیوی کا دودھ غلطی سے منہ میں جانے، اسے پینے اور بیوی کا جسم دیکھنے کا حکم


سوال

 اگر کسی شخص کے منہ میں غلطی سے بیوی کا دودھ چلا جائے اوروہ تھوک بھی دے تو اس کے لیے اسلام میں کیا حکم ہے؟ اگر کوئی غلطی سے بیوی کا دودھ پی لے اس کے لیے اسلام میں کیا حکم ہے؟

کیا بیوی کا جسم دیکھنا جائز ہےیا نہیں؟

جواب

1۔ بیوی کا دودھ غلطی سے منہ میں چلا جائے پھر تھوک دیا یا پی لیابہر صورت نکاح پر اثر نہیں  پڑتا ، البتہ  عمداً بیوی کا دودھ پینا حرام ہے، اس پر توبہ استغفار لازم ہے۔

2۔  بیوی کا جسم دیکھنا جائز ہے ، لیکن زوجین کا ایک دوسرے کی شرمگاہ دیکھنا پسندیدہ نہیں. فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 143903200077

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن


تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں