بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 16 اکتوبر 2019 ء

دارالافتاء

 

بچے کی نجاست صاف کرنے کے بعد ماں کا دوبارہ وضو کرنا


سوال

 کیا بچے کی نجاست صاف کرنے کے بعد ماں کا دوبارہ وضو کرنا ضروری ہے؟  اگر نہیں ہے تو کس عمر تک اور اگر ہے تو کس عمر تک؟ 

جواب

کسی بھی عمر میں بچے کی نجاست صاف کرنے کے بعد ماں کا دوبارہ وضو کرنا ضروری نہیں  ہے۔ وضو صرف ان چیزوں سےٹوٹتا ہے۔

وضو توڑنے والی چیزیں درج ذیل ہیں :

  1. پاخانہ یا پیشاب کی جگہ سے کسی چیز کا نکلنا۔
  2. جسم سے خون یا پیپ کا نکل کر مخرج سے پاک جگہ پر پہنچنا۔
  3. ٹیک  لگا کر سونا۔
  4. منہ بھر کے قے آنا۔
  5. بالغ کا نمازِ جنازہ کے علاوہ نماز کے اندر قہقہہ لگانا۔
  6. بے ہوشی۔
  7. مباشرتِ فاحشہ۔ (یعنی بلاحائل میاں بیوی کی شرم گاہوں کا ملنا)

البتہ بچے کی نجاست صاف کرتے ہوئے نجاست ماں کے کپڑے یا بدن کے کسی حصے پر لگے تو اسے پاک کرنا ضروری ہوگا۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144008200237

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئے