بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

22 ذو الحجة 1440ھ- 24 اگست 2019 ء

دارالافتاء

 

اضیام کے معنی


سوال

لفظ اضیام کا معنی کیا ہے؟

جواب

’’اضیام‘‘ کا  اصل مادہ ”ضیم“( ض ی م) ہے جس کے معنی نقصان ، کوتاہی، ذلت اور ظلم وغیرہ کے ہیں، مضیم، مستضیم اس مادہ سے ہیں اس کے معنی مظلوم کے آتے ہیں، اور ظلم کا انکار کرنے والے کے بھی آتے ہیں، لیکن خود  لفظ ”اضیام“ لغت میں مستعمل نہیں ہے۔

اگر آپ کا مقصد اس لفظ کے معنی پوچھنے  کا یہ ہے کہ یہ نام رکھ سکتے ہیں یا  نہیں تو  اس کا جواب یہ ہے کہ یہ نام رکھنا مناسب نہیں ہے۔

لسان العرب (12/ 359):
"ضيم: الضَّيْمُ الظُّلْمُ. وَضَامَهُ حَقَّه ضَيْماً: نَقَصه إِيَّاهُ. قَالَ اللَّيْثُ: يُقَالُ ضَامَه فِي الأَمر وضامَهُ فِي حَقِّهِ يَضِيمُه ضَيْماً، وَهُوَ الانتقاصُ، واسْتَضامَه فَهُوَ مَضِيمٌ مُسْتَضامٌ أَي مَظْلُوم، وَقَدْ جُمعَ المصدرُ مِنْ هَذَا فَقِيلَ فِيهِ ضُيُومٌ؛ قَالَ المُثَقِّبُ الْعَبْدِيُّ:
ونَحْمي عَلَى الثَّغْرِ المَخُوفِ، ونَتَّقِي ... بغارَتِنا كَيْدَ العِدى وضُيُومَها
وَيُقَالُ: مَا ضِمْتُ أَحداً وَمَا ضُمْتُ أَي مَا ضامَني أَحدٌ. والمَضِيمُ: المَظْلُوم. الْجَوْهَرِيُّ: وَقَدْ ضِمْتُ أَي ظُلِمْتُ، عَلَى مَا لَمْ يُسَمَّ فَاعِلُهُ، وَفِيهِ ثَلَاثُ لُغَاتٍ: ضِيمَ الرجلُ وضُيِمَ وضُومَ كَمَا قِيلَ فِي بِيعَ؛ قَالَ الشَّاعِرُ:
وَإِنِّي عَلَى المَوْلى، وَإِنْ قَلَّ نَفْعُه، ... دَفُوعٌ، إِذَا مَا ضُمتُ، غَيْرُ صَبورِ
وَفِي حَدِيثِ الرُّؤْيَةِ، وَقَدْ قِيلَ لَهُ، عَلَيْهِ السَّلَامُ: أَنَرى رَبَّنا يَا رسولَ اللَّهِ؟ فَقَالَ: أَتُضامُونَ فِي رُؤْيَةِ الشَّمْسِ فِي غَيْرِ سَحابٍ؟ قَالُوا: لَا، قَالَ: فَإِنَّكُمْ لَا تضامُونَ فِي رُؤْيَتِهِ
، وَرُوِيَ تُضارُونَ  وتُضارُّونَ ، وَقَدْ تَقَدَّمَ. التَّهْذِيبِ: تضامُون وتُضامُّون، بِالتَّشْدِيدِ وَالتَّخْفِيفِ، التشديدُ مِنَ الضَّمِّ وَمَعْنَاهُ تُزاحَمُون، وَالتَّخْفِيفُ مِنَ الضَّيْم لَا يَظْلِمُ بعضُكم بَعْضًا. والضِّيمُ، بالكسرِ: ناحيةُ الجَبَل والأَكَمةِ. وضِيمٌ: جَبَلٌ فِي بِلَادِ هُذَيْل".

تاج العروس (32/ 546):
"ض ي م : ( {ضَامَه حَقَّه} يَضِيمُه) {ضَيْمًا: نَقَصَه إِيّاه. وَقَالَ اللَّيثُ: ضامَه، (} واستضاَمَه: انْتَقَصَه، فَهُوَ {مَضِيمٌ.} ومُسْتَضامٌ) أَي: مَظْلُوم. وَيُقَال: مَا {ضُمْت أَحَدًا، وَمَا ضُمْتُ أَي: مَا} ضَامَني أَحَدٌ. وَقَالَ الجَوْهَرِيّ. وَقد {ضِمْتُ أَي: ظُلِمْتُ على مَا لَمْ يُسَمّ فاعِلُه. وَفِيه ثَلاثُ لُغَات} ضِيمَ الرَّجُلُ، {وضُيمَ،} وضُومَ كَمَا قِيلَ فِي بِيع قَالَ الشَّاعِر:
(وَإِنِّي على المَوْلَى وإنْ قَلَّ نَفْعُهُ ... دَفُوعٌ إِذا مَا {ضُمْتُ غَيرُ صَبُورِ)

(} والضَّيْمُ: الظُّلْم ج: {ضُيومٌ) . قَالَ اللَّيثُ: هُوَ (مَصْدرٌ جُمِع) ، قَالَ المُثقِّب العَبْدي:
(ونَحْمِي على الثَّغْرِ المُخُوفِ وَنَتَّقِي ... بغارَتِنا كَيْدَ العِدَى} وضُيُومَها)

وَقد حَدِيثِ الرْؤْية: " إِنَّكُم لَا {تُضامُون فِي رُؤْيَته " أَي: لَا يَظْلِم بَعضُكم بَعْضًا.
(و) } الضَّيمُ (بالكَسْر: ناحِيَةُ الجَبَل) والأَكَمَة.
(و) أَيْضًا: (ع م) أَي: مَوْضِع

أساس البلاغة (1/ 591)
ض ي م: مازلت أضام وأستضام وأنا مضيم ومستضام، وهو آبى الضيم". 
فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144007200277

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئے