بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 16 ستمبر 2019 ء

دارالافتاء

 

ابیہا نام رکھنا


سوال

ہم اپنی بیٹی کا نام "ابیہا"  رکھنا چاہتے ہیں، ہم گھر والے تو اس کے تلفظ کا پورا خیال رکھیں گے، تاہم اگر کوئی صحیح تلفظ نہ کرے  "ابیہہ"  کہہ دے تو کوئی فرق تو نہیں پڑے گا؟

جواب

 ’’ أَبِيْهَهْ‘‘ کے معنی باب سمع و فتح سے سمجھ دار ہونے کے آتے ہیں، جیساکہ معجم الرائد میں ہے:

"أبه : (فعل) 1- أبهه : نبهه ، فطنه".

یہ نام رکھ سکتے ہیں، البتہ نام کا صحیح تلفظ کا خیال خود بھی رکھیں اور دیگر احباب کو بھی تلقین کریں، عربی لغت کے اعتبار سے ’’ابیہہ‘‘  تلفظ کے ساتھ نام بہتر ہے۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144004200256

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئے