بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

20 ذو الحجة 1440ھ- 22 اگست 2019 ء

بینات

 
 

وٹامن ’’ای‘‘ کی حفاظت کے لئے جیلاٹن سے بنے کیپسول کا استعمال

وٹامن ’’ای‘‘ کی حفاظت کے لئے جیلاٹن سے بنے کیپسول کا استعمال 

کیا فرماتے ہیں علماء کرام ومفتیان عظام اس مسئلہ کے بارے میں کہ: وٹامن ’’E‘‘نباتاتی ہے، پودوں سے حاصل کرنے کے بعداُسے کیپسول میں محفوظ کرلیا جاتا ہے، چونکہ کیپسول نماخول (جس کی ساخت میں جیلاٹن شامل ہے) کے بارے میں ہمیں علم نہیں ہے کہ اُسے کسی جانور کے اجزاء سے بنایا جاتا ہے یا کسی اور چیز سے۔ کیا یہ وٹامن ’’E‘‘ جیلاٹن کے بنے کیپسول سے نکالنے کے بعد خارجی استعمال یعنی جلد پر استعمال کیا جاسکتا ہے؟  مستفتی:محمد عبد اللہ الجواب ومنہ الصدق والصواب وٹامن ’’E‘‘ جب پودوں سے حاصل شدہ سیال مادہ ہے تو وہ پاک ہے،جس کے قابل استعمال ہونے میں فی نفسہٖ کوئی شبہ نہیں ،جیساکہ’’ فتاویٰ شامی‘‘ میں ہے: ’’حکم العصیرحکم المائ، قال ابن عابدین:(قولہ:حکم العصیر حکم المائ) أی فی أنہ تزال بہ النجاسۃ الحقیقیۃ وأنہ إذا کان عشراً فی عشر لاینجس بوقوع النجاسۃ کمافی الماء … فی أنہ لو عصر العنب وھو یسیل فأدمی رجلہ ولم یظھر أثر الدم لاینجس عند أبی حنیفۃؒ وأبی یوسفؒ کما فی المنیۃ عن المحیط ‘‘۔ (رد المحتار علی الدر المختار، باب الأنجاس ، فصل فی الاستنجاء ، ۱/۳۴۹ ، ط:سعید) شبہ صرف اس میں ہے کہ حرام اشیاء سے بنی ہوئی جیلاٹن سے بنے ہوئے کیپسول میں محفوظ ہونے کی وجہ سے وٹامن ’’E‘‘  ناپاک اور ناقابل استعمال ہوا یا نہیں؟ کیونکہ نجس چیزدوسری چیز کے ساتھ مل جائے تو وہ چیز بھی نجس ہوجاتی ہے،جیساکہ ’’بدائع الصنائع‘‘ میں ہے: ’’والماء یتنجس أو یفسد بمجاورۃ النجس، لأن الأصل أن ما جاور النجس نجس بالشرع‘‘۔ (بدائع الصنائع،کتاب الطہارۃ،فصل فی بیان مقدار مایصیر المحل بہ نجساً،۱؍۷۵، ط:سعید) لیکن چونکہ وٹامن ’’E‘‘سیّال مادہ ہونے کے ساتھ ساتھ لزوجت اور چکنائی پر مشتمل ہوتا ہے، اس لئے جیلاٹن کے خول سے نجاست کے اثر کو وٹامن ’’E‘‘قبول کرتا ہے یا نہیں؟ یہ ایک ظنی بات ہے، تاہم بیرونی استعمال کی گنجائش ہے۔ مگر نماز ودیگر عبادات کے وقت جسم کے اس حصہ کو جہاں لوشن کا استعمال کیا ہو، دھولیا جائے، تاکہ یقینی طہارت حاصل ہوجائے۔ ’’فتاویٰ شامی‘‘ میں ہے: ’’(وذبح ما لا یوکل یطہر لحمہ وشحمہ وجلدہ)حتی لو وقع فی الماء القلیل لایفسدہ، وہل یجوز الإنتفاع بہ فی غیر الأکل؟ قیل: لایجوز اعتباراً بالأکل وقیل: یجوز کالزیت إذا خالطہ ودک المیتۃ والزیت غالب لایوکل وینتفع بہ غیر الأکل‘‘۔ (رد المحتار علی الدر المختار،کتاب الذبائح،   ۹؍۵۱۳،ط:دار المعرفۃ ۔و أیضاً ،۶؍۳۰۸،ط:سعید)                                                                         فقط، واﷲ اعلم          الجواب صحیح                    الجواب صحیح                        کتبہ     محمد عبد المجید دین پوری           شعیب عالم                      محمد اسد اﷲ                                                                  متخصص فقہ اسلامی                                                      جامعہ علوم اسلامیہ علامہ بنوری ٹاؤن کراچی    

 

 

 

 

 

 

 

تلاشں

شکریہ

آپ کا پیغام موصول ہوگیا ہے. ہم آپ سے جلد ہی رابطہ کرلیں گے

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئے