بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 18 ستمبر 2019 ء

بینات

 
 

مکاتیب علامہ محمد زاہد کوثری رحمہ اللہ بنام مولانا سیدمحمد یوسف بنوری رحمہ اللہ (سولہویں قسط)

مکاتیب علامہ محمد زاہد کوثری  رحمہ اللہ 

 بنام مولانا سیدمحمد یوسف بنوری رحمہ اللہ

 

            (سولہویں قسط)

 

{  مکتوب :… ۲۶  }

 

جناب صاحبِ فضیلت، اوصافِ جمیلہ سے متصف، محققِ راسخ، سید محمد یوسف بنوری حفظہ اللّٰہ ورعاہ
وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

بعد سلام! آپ کا والانامہ موصول ہوا، میں علامہ مفتی مہدی حسن -اللہ تعالیٰ اُنہیں خیر وعافیت کے ساتھ بقائے طویل عطا فرمائے- کی آمد سے حاصل ہونے والی مانوسیت میں آپ کا شریک ہوں اور راہِ علم اور خدمتِ دین میں (آپ دونوں کے درمیان) باہمی تعاون اور اشتراکِ عمل پر مجھے رشک آتا ہے، آپ سے ہمیشہ بابرکت دعاؤں کی توقع رکھتا ہوں۔ 
ہمارے گھر کے مالک نے اپنا گھر کسی اور شخص کو فروخت کردیا ہے، اور نفع (میں اضافے) کے شوق میں اسے منہدم کرکے نئے سرے سے تعمیر کا ارادہ رکھتا ہے، اس بنا پر اس نے مکان خالی کرنے کا مطالبہ کیا ہے اور ہم اب تک مناسب گھر کرائے پر نہیں لے سکے۔ یہ معاملہ مکانات کے سخت بحران کے ان لمحات میں بہت تکلیف دہ ہے، اللہ سبحانہ ہمارے لیے اس مہم کو آسان فرمائے۔ آپ کے خط کے جواب میں تاخیر کا سبب یہی امید تھی کہ شاید (مکان کی تبدیلی کی صورت میں خط وکتابت کا) نیا پتہ ذکر کرسکوں، لیکن تاحال ایسا نہ ہو سکا، اس لیے مزید تاخیر مناسب نہ سمجھی۔
(شاہ ولی اللہ) دہلوی(رحمہ اللہ) کے متعلق کچھ کہنا خود میرے نفس پر شاق تھا، لیکن (حنفی) مذہب کو کمزور ظاہر کرنے کے لیے مخالفین ان کی تحریروں سے فائدہ اُٹھاتے دکھائی دیتے ہیں، اس لیے ان کے نقطہائے نظر کے حوالے سے بعض حقائق کو واشگاف کرنا پڑا۔ باقی (شاہ اسماعیل رحمہ اللہ کی تالیف) عبقات (۱) کا عرصہ پہلے میں نے مطالعہ کیا ہے، کیوں کہ ’’دار الکتب المصریۃ‘‘ میں (اس کا نسخہ) موجود ہے، میں ’’فتح الملہم‘‘ کے واسطے(۲) سے اس (کے مباحث) سے آگاہ نہیں ہوا، گزرے زمانے میں لوگ کہتے تھے: حکم اور حدیث کے معاملے میں تساہل صحیح نہیں۔ (۳) زیادہ سے زیادہ یہی ممکن تھا کہ جب تک کچھ کہنا ضروری نہ ہو تو خاموشی اختیار کرلی جاتی۔
مسئلہ تجلیات ان (شاہ صاحب) کی کتابوں میں بتکرار بیان ہوا ہے، میری رائے ہے کہ ایسے ذوقی علوم جن (کے کماحقہا بیان) سے تعبیرات تنگ دامنی کا شکار ہوجاتی ہیں، انہیں اصحابِ علم کے لیے چھوڑ دیا جائے اور اہلِ علم کے معیارات کے مطابق علومِ نقلیہ وعقلیہ پر اکتفا کرلیا جائے۔ جو شخص بھی اپنی وسعت سے باہر مسائل ومباحث میں عقل کھپائے گا تو تیمی اور دہلوی تناقضات میں مبتلا ہوکر رہے گا، اللہ تعالیٰ اپنے حبیبِ مصطفی (صلی اللہ علیہ وسلم) کے طفیل ہماری رہنمائی فرمائے(آمین)۔
فقہ اسلامی کی تاریخ کے موضوع پر حَجْوی(۴) کی ’’الفکر السامی‘‘ چار حصوں میں بہت نادر ہے، اس کتاب کے مؤلف، وَفَیات اور تراجمِ رجال کے حوالے سے کثرتِ اغلاط کے باوجود بہت سے پہلوؤں پر (اہلِ) مغرب سے مناقشہ کرتے ہیں، انہوں نے رومی قانون کی تقسیم کے طرز پر فقہ کو بچپن، جوانی، ادھیڑ پن اور بڑھاپے کے ادوار میں تقسیم کیا ہے، لیکن دورِ نبوت کو فقہ کا زمانۂ طفولت شمار کیا ہے، جبکہ (صحیح معنوں میں) اپنے کہے کا فہم رکھنے والا ایسی بات نہیں کہہ سکتا۔ بہرکیف پھر بھی اس کتاب سے آگاہی فائدے سے خالی نہیں، البتہ جدیدیات اور تیمی شطحیات سے تأثر نے ان کی بعض خوبیوں پر پردہ ڈال دیا ہے۔ (۵)
اور ابوزہرہ (۶) عصری حقوق کے طلبا کو ائمہ اعلام کے موروثی ذخیرے کے اہتمام کی جانب متوجہ کرنے کی بنا پر مجھے بھلے لگتے ہیں، لیکن اس کا یہ مطلب نہیں کہ ان کے تمام اقوال پسندیدہ ہیں، (۷) اور ہمارے درمیان غائبانہ تعارف ہے۔ (۸)
مجھے ’’تاریخ البخاری‘‘ کے جزء دوم (دونوں قسموں) اور ابن فُوَرَک کی ’’مشکل الحدیث‘‘ کی ضرورت ہے۔ آپ کی مطلوبہ کتب بھی ان شاء اللہ! جلد ہی بھیجوں گا۔ ’’عبقات‘‘ اگر آپ کو بازار میں دست یاب نہ ہو تو اپنا ذاتی نسخہ -جیسے آپ نے پہلے کہا تھا- بھیجنے کا کوئی باعث نہیں۔ مولانا میاں کی جانب سے اپنی رائے کا کوئی جواب نہیں ملا، شاید وہ آپ سے براہِ راست خط وکتابت کریں گے۔
امید ہے کہ آپ کے علمی عزائم تیز تر ہوں گے، خواہ مشکلات جیسی بھی پیش آئیں اور آرزؤوں کے پورا ہونے میں جتنی بھی تاخیر ہو؛ اس لیے کہ توفیق اللہ عزوجل ہی کی طرف سے ہوتی ہے۔ عزیز احباب کو میرا سلام پہنچے، معزز ومحترم بھائی! میں آپ سب کی دعاؤں کا متمنی ہوں۔ 
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                  مخلص
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                             محمد زاہد کوثری
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                      ۱۴؍جمادی الثانیہ، سن ۱۳۶۸ھ
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                           شارع عباسیہ نمبر: ۶۳
پس نوشت: ’’المحدث الفاصل‘‘ کی عبارت کے حوالے سے آپ نے کیا عمدہ توجیہ پیش کی ہے! لیکن میں نے (مکتبہ) ظاہریہ میں موجود جس نسخے سے یہ عبارت نقل کی ہے، اس پر حافظ عبدالغنی مقدسی (v) کا خط بھی ہے، لہٰذا ’’ما لأمۃ‘‘ کو اس مفہوم پر محمول کیا جاسکتا ہے کہ وہ انفرادی (روایات) کو قبول نہیں کرتے تھے، بلکہ ان روایات کو قبول کرتے تھے جنہیں ایک جماعت نے روایت کیا ہو۔(۹)
حواشی
۱:- علامہ کوثری  رحمہ اللہ نے اپنی کتاب ’’حسن التقاضی‘‘ میں حضرت شاہ ولی اللہ رحمہ اللہ پر نقد کے ضمن میں ’’عبقات‘‘ پر بھی تنقید کی ہے۔ محدثین وحنفیہ اور تصوف کے درمیان تطبیقی کوششیں کرنے والوں کے ہاں اس کتاب کی بہت اہمیت ہے، مجلسِ علمی کراچی نے سن ۱۳۸۱ھ میں یہ کتاب دوبارہ چھپوائی تھی، اور اس ایڈیشن پر حضرت بنوری رحمہ اللہ نے مقدمہ بھی لکھا اور کتاب کی تعریف کی، یہ مقدمہ مقدماتِ بنوریہ (ص: ۲۱۲- ۲۱۹) میں درج ہے۔
۲:- مولانا شبیر احمد عثمانی رحمہ اللہ نے ’’فتح الملہم‘‘ (ج:۲،ص:۲۰۶) میں شاہ اسماعیل شہید رحمہ اللہ کی ’’عبقات‘‘ سے تجلی کی بحث ذکر کی ہے، اور لگ بھگ سات صفحات پر مشتمل طویل اقتباس نقل کیا ہے۔ 
۳:-یہ قول مشہور ہے اور علمائے سلف کی ایک جماعت سے منقول ہے، امام عقیلی نے امام عبدالرحمن بن مہدی رحمہ اللہ کا مقولہ ان الفاظ میں نقل کیا ہے: ’’خصلتان لا یستقیم فیہما حسن الظن: الحکم والحدیث‘‘ (الضعفاء للعقیلی، ج:۱،ص: ۹) یعنی ’’دو چیزوں میں حسنِ ظن درست نہیں: حکم اور حدیث۔‘‘
۴:-محمد بن حسن بن عربی حَجْوِی ثعالبی زینبی فاسی مالکی: نامور عالم، فقیہ اور مفسر تھے۔ اس آخری عہد میں مغرب کے نمایاں رجالِ کار میں شمار ہوتے تھے اور علومِ دینیہ کی تجدید کے قائل تھے۔ سن ۱۲۸۱ھ میں ولادت ہوئی اور سن ۱۳۷۶ھ میں انتقال ہوا۔ دیکھیے: ’’الأعلام‘‘ زرکلی (ج:۶،ص: ۹۶) اور ’’تراجم ستۃ من فقہاء العالم الإسلامی‘‘ شیخ عبدالفتاح ابوغدہؒ (ص: ۱۳۷ تا۲۱۵)۔
۵:- شیخ عبدالفتاح ابوغدہ رحمہ اللہ نے بھی ’’تراجم ستۃ من فقہاء العالم الإسلامی‘‘ میں اس کتاب کی تعریف کی ہے۔ دیکھیے: (ص: ۱۸۷-۱۸۸)۔
۶:-محمد بن احمد بن مصطفی ابوزہرہ: کبار فقہاء میں شمار ہوتے ہیں اور ان کی بہت سی مفید تالیفات ہیں۔ سن ۱۳۱۶ھ میں پیدائش ہوئی اور سن ۱۳۹۴ھ میں وفات پائی۔ 
علامہ کوثریؒ ان کے متعلق رقم طراز ہیں: ’’جناب استاذِ باکمال ولائق، سید محمد ابوزہرہ ، استاذِ شریعہ کلیہ حقوق قاہرہ۔‘‘ (حسن التقاضی، ص:۶۹)
مزید حالات کے لیے ملاحظہ کیجیے: ‘‘أبوزہرۃ‘‘ابوبکر عبدالرزاق، ’’الأعلام‘‘ زرکلی (ج:۶،ص: ۲۵-۲۶) اور ’’من أعلام الدعوۃ‘‘ عبداللہ عقیل (ج:۲،ص: ۷۷۱-۷۸۱)۔
۷:-بظاہر حضرت بنوری رحمہ اللہ نے علامہ کوثری رحمہ اللہ کے اپنی کتاب ’’حسن التقاضی‘‘ میں شیخ ابوزہرہ رحمہ اللہ کی تعریف کرنے پر ان سے استفسار کیا ہوگا، اور اس خط میں موصوف اس کا جواب دے رہے ہیں۔ علامہ کوثریؒ نے اسی مقام پر ائمہ اربعہؒ کے حالات اور علمی کارناموں پر شیخ کے سلسلۂ کتاب کو بھی بلند الفاظ میں سراہا ہے۔ 
۸:-شیخ ابوزہرہ رحمہ اللہ نے اپنے متعلق علامہ کوثریؒ کی تحریر پڑھ کر ازخود ان سے ملاقات کی اور یوں باہم تعارف ہوا۔ بعد ازاں شیخ نے علامہ موصوف کے متعلق مشہورِ زمانہ مقالہ تحریر کیا تھا، جو ’’مقالات الکوثری‘‘ کی ابتدا میں چھپا ہوا ہے۔ 
۹:-علامہ کوثری رحمہ اللہ نے ’’حسن التقاضی‘‘ (ص:۱۱) میں قاضی رامہرمزی رحمہ اللہ کی کتاب ’’المحدث الفاصل‘‘ کے حوالے سے نقل کیا ہے: ’’(رامہرمزی نے) عفان سے روایت کیا ہے کہ انہوں نے فرمایا: ہم کوفہ میں چار ماہ مقیم رہے، چاہتے تو اس دوران ایک لاکھ احادیث لکھ سکتے تھے، لیکن ہم نے صرف پچاس ہزار کی مقدار احادیث ہی لکھیں، (آگے زیرِ بحث عبارت کچھ یوں ہے: ’’وما رضینا من أحد إلا ما لأمۃ إلا شریکا، فإنہٗ أبی علینا‘‘ یعنی) اور ہم کسی (کی روایات میں) سے انہی (روایات) پر راضی ہوئے جو امت کی تھیں، سوائے شریک کے کہ انہوں نے ہم پر نکیر کی، اور ہم کوفہ میں کسی کو لحن (ضبط واتقان میں غلطی) اور (روایتِ احادیث میں) تساہل برتنے والا نہیں پایا۔‘‘ علامہ کوثریؒ نے یہی عبارت ’’نصب الرایۃ‘‘ کے مقدمہ ’’فقہ أہل العراق وحدیثہم‘‘ (ص:۵۱) میں بھی نقل کی ہے، حضرت بنوری رحمہ اللہ کو اس عبارت کے ایک لفظ ’’ما لأمۃ‘‘ پر اشکال ہوا، چنانچہ حضرت ’’نصب الرایۃ‘‘ کے مقدمہ کے حاشیہ میں اس لفظ کی توجیہ کرتے ہوئے لکھتے ہیں: ’’مراد یہ ہے کہ کسی شخص یا اس کی روایات کو قبول کرنے کے حوالے سے ہم اسی پر راضی ہوتے تھے جسے اُمت نے تلقی بالقبول بخشا ہو، اس مشکل شرط کو دیکھیے اور پھر (روایات کی) اس کثرت پر غور کیجیے، یہ نکتہ اہم ہے، اسے سمجھ لیجیے۔‘‘  ’’حسن التقاضی‘‘ میں علامہ کوثریؒ نے دوبارہ یہی عبارت بطورِ استشہاد پیش کی تو حضرت بنوریؒ نے اس موقع کو مناسب جان کر اس کلمے کی دوسری قراء ت ذکر کی، پیشِ نظر مکتوب میں علامہ موصوف نے حضرت کو اس کا مذکورہ جواب دیا ہے، ’’المحدث الفاصل‘‘ کے مطبوعہ نسخے(ص: ۵۵۹) میں یہ عبارت یوں درج ہے: ’’وما رضینا من أحد إلا بالإملاء إلا شریکا‘‘۔ ڈاکٹر سعود سرحان نے مطبوعہ نسخے کی اس عبارت کو علامہ کوثریؒ کی ذکر کردہ عبارت سے صحیح قرار دیا ہے، لیکن ہماری رائے میں کتاب کے اصل مخطوطات کی مراجعت کیے بنا کسی پہلو کو ترجیح نہیں دی جاسکتی۔                                                                                                                                                                                                                                     (جاری ہے)

تلاشں

شکریہ

آپ کا پیغام موصول ہوگیا ہے. ہم آپ سے جلد ہی رابطہ کرلیں گے

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئے