بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 19 جولائی 2019 ء

بینات

 
 

منافذِ معتادہ (کان، ناک، آنکھ وغیرہ) میں دوا ڈالنے  اور انجکشن لگانے سے روزے کا حکم!

منافذِ معتادہ (کان، ناک، آنکھ وغیرہ) میں دوا ڈالنے  اور انجکشن لگانے سے روزے کا حکم!


کیا فرماتے ہیں مفتیانِ کرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ:
۱:-کیا روزے کے دوران شوگر چیک کرنے سے روزہ ٹوٹتا ہے؟
۲:-کیا روزے کے دوران انسولین کا انجکشن لگانے سے روزہ ٹوٹتا ہے؟
۳:-کیا روزے کے دوران گلوکوز کا انجکشن لگانے سے روزہ ٹوٹتا ہے؟
۴:-کیا روزے کے دوران کان کے ڈراپ، ناک میں اسپرے اور آنکھوں کے قطرے استعمال کرنے سے روزہ ٹوٹتا ہے؟
۵:-روزے کے دوران اگر شوگر کم یا زیادہ ہونے کی صورت میں روزہ توڑا جائے تو کفارہ یا قضا کیا ہوگا؟(ایک روزہ یا ساٹھ روزے؟)
۶:-کیا حاملہ خواتین اور دودھ پلانے والی عورتیں روزہ رکھ سکتی ہیں؟
                                                  سائل:فرخ، بقائی ڈائی بیٹک، کراچی
الجواب حامداً ومصلیاً
۱:-شوگر کے مریض کے لیے روزہ کے دوران جسم سے خون نکال کر ٹیسٹ کروانا جائز ہے، اس سے روزہ فاسد نہیں ہوگا، کیونکہ ٹیسٹ کے لیے جسم سے خون نکالاجاتاہے، منفذ (قدرتی راستے) سے جسم میں کوئی چیز داخل نہیں کی جاتی اور خون نکلنے یا نکالنے سے روزہ نہیں ٹوٹتا۔ ’’فتاویٰ عالمگیری ‘‘ میں ہے:
’’ولابأس بالحجامۃ إن أمن علی نفسہ الضعف، أما إذا خاف فإنہٗ یکرہ وینبغی لہٗ أن یؤخر إلٰی وقت الغروب وذکر شیخ الإسلام شرط الکراہۃ ضعف یحتاج فیہ إلی الفطر، والفصد نظیر الحجامۃ۔‘‘       (فتاویٰ عالمگیری ،ج:۱،ص:۱۹۹، ط:رشیدیہ)
’’النہر الفائق ‘‘ میں ہے:
’’(أو احتجم) لما أخرجہ البخاري أنہٗ علیہ السلام احتجم وہو صائم۔‘‘ 
                                             (النہر الفائق ،ج:۲،ص:۱۶،ط:دار الکتب العلمیہ)
۲،۳:- انسولین چونکہ کھال میں لگانے کا انجکشن ہے اور روزہ کی حالت میں گوشت میں انجکشن لگانے سے روزہ نہیں ٹوٹتا، اس لیے روزہ کی حالت میں انسولین لگانے میں کوئی قباحت نہیں۔ اسی طرح گلوکوز کا انجکشن لگانا روزہ کو فاسد نہیں کرتا، البتہ گلوکوز کا ا نجکشن بلاضرورت طاقت کے لیے چڑھانا مکروہ ہے۔ ’’فتاویٰ شامی‘‘ میں ہے:
’’لأنہٗ أثر داخل من المسام الذی ہو خلل البدن والمفطر إنما ہو الداخل من المنافذ للاتفاق علی أن من اغتسل فی ماء فوجد بردہٗ فی باطنہٖ أنہ لایفطر۔‘‘ 
                                                   (فتاویٰ شامی ،ج:۲،ص:۳۹۵، ط:سعید)
وفیہ ایضاً:
’’وإنما کرہ الإمام الدخول فی الماء والتلفف بالثوب المبلول لما فیہ من إظہار الضجر فی إقامۃ العبادۃ لأنہ مفطر۔‘‘              (فتاویٰ شامی ،ج:۲،ص:۳۹۶، ط:سعید)
۴:-کان میں دوا ڈالنے سے روزہ فاسد ہوجاتاہے، فقہاء کرام کی تصریحات کے مطابق کان میں ڈالی ہوئی دوا دماغ میں براہِ راست یا بابواسطہ معدہ میں پہنچ جاتی ہے، جس سے روزہ فاسد ہوجاتاہے۔ ’’بدائع الصنائع ‘‘ میں ہے:
’’وما وصل إلی الجوف أو إلی الدماغ عن المخارق الأصلیۃ کالأنف والأذن والدبر بأن استعط أو احتقن أو أقطر فی أذنہ فوصل إلی الجوف أو إلی الدماغ فسد صومہٗ، أما إذا وصل إلی الجوف فلاشک فیہ ، لوجود الأکل من حیث الصورۃ، وکذا إذا وصل إلی الدماغ لأنہٗ لہ منفذ إلی الجوف ، فکان بمنزلۃ زاویۃ من زوایا الجوف۔‘‘                (بدائع الصنائع ،ج:۲،ص:۹۳، ط:دارالکتب العلمیہ)
’’فتاویٰ شامی ‘‘ میں ہے:
’’والتحقیق أن بین جوف الرأس وجوف المعدۃ منفذاً أصلیاً ، فما وصل إلٰی جوف الرأس یصل إلٰی جوف البطن۔‘‘            (فتاویٰ شامی ،ج:۲،ص:۴۰۳، ط:سعید)
اسی طرح ناک میں اسپرے کرنے سے اور تردوا ڈالنے سے روزہ فاسد ہوجاتاہے، البتہ اگر اتنی کم مقدار میں اسپرے کی جائے جس سے یقینی طور پر دوا اندر جانے کا خدشہ نہ ہو، بلکہ دوا ناک میں ہی رہ جاتی ہے تو ایسی صورت میں روزہ فاسد نہیں ہوگا۔
’’فتاویٰ شامی ‘‘ میں ہے:
’’أو احتقن أو استعط فی أنفہٖ شیئًا ۔۔۔۔ قضی فقط  ۔۔۔۔ (الرد) قلت: ولم یقیدوا الاحتقان والاستعاط والإقطار بالوصول إلی الجوف  لظہورہٖ فیہا وإلا فلابد منہ حتی لو بقي السعوط فی الأنف ولم یصل إلی الرأس لایفطر۔‘‘ 
                                                                 (فتاویٰ شامی ،ج:۲،ص:۴۰۲، ط:سعید)
’’المحیط البرہانی ‘‘ میں ہے:
’’وإذا استعط أو أقطر فی أذنہٖ إن کان شیئًا یتعلق بہٖ صلاح البدن نحو الدہن والدواء یفسد صومہٗ من غیر کفارۃ وإن کان شیئًا لایتعلق بہٖ صلاح البدن کالماء قال مشایخنا: ینبغی أن لایفسد صومہٗ إلا أن محمدا رحمہ اللّٰہ تعالٰی لم یفصل بینما یتعلق بہٖ صلاح البدن وبینما لایتعلق۔‘‘ 
                                         (المحیط البرہانی ،ج:۲،ص:۳۸۳، ط:دارالکتب العلمیہ)
البتہ کان اور ناک میں دوا ڈالنے کی صورت میں اگر روزہ فاسد ہوجاتاہے تو صرف قضاء لازم ہوگی، کفارہ نہیں، جیساکہ مندرجہ بالا حوالہ جات سے معلوم ہوا۔ روزہ کی حالت میں آنکھ میں قطرے ڈالنے سے روزہ فاسد نہیں ہوتا، اگرچہ روزہ دار اس دوا یا قطروں کا ذائقہ حلق میں محسوس کرے۔ ’’فتاویٰ تاتارخانیہ ‘‘ میں ہے:
’’وإذا اکتحل أو أقطر بشیئ من الدواء فی عینیہ لایفسد الصوم عندنا۔‘‘ 
                                        (فتاویٰ تاتارخانیہ، ج:۲، ص:۳۶۶، ط:ادارۃ القرآن)
’’الفقہ الاسلامی وادلتہ ‘‘ میں ہے:
’’مالایفسد الصوم عند الحنفیۃ۔۔۔۔۔۔۔۳-القطرۃ أو الاکتحال فی العین ولو وجد الصائم الطعم أو الأثر فی حلقہٖ لأن النبي صلی اللّٰہ علیہ وسلم اکتحل فی رمضان وہو صائم۔‘‘                   (الفقہ الاسلامی وادلتہ ،ج:۳،ص:۱۷۱۰، ط:دارالفکر)
۵:-روزہ کے دوران اگر شوگر کم یا زیادہ ہونے کی وجہ سے روزہ توڑ دیا تو ایسی صورت میں صرف قضاء لازم ہوگی، کفارہ نہیں۔
’’فتاویٰ شامی ‘‘ میں ہے:
’’(أو لمریض خاف الزیادۃ) لمرضہٖ وصحیح خاف المرض ۔۔۔۔ (الفطر) یوم العذر إلا السفر کما سیجيء (وقضوا) لزوما (ماقدروا بلافدیۃ)۔‘‘ 
                                                   (فتاویٰ شامی ،ج:۲،ص:۴۲۳، ط:سعید)
’’فتاویٰ عالمگیری ‘‘ میں ہے:
’’(ومنہا المرض) المریض إذا خاف علی نفسہ التلف أو ذہاب عضو یفطر بالإجماع وإن خاف زیادۃ العلۃ وامتدادہا فکذٰلک عندنا وعلیہ القضاء إذا أفطر ، کذا فی المحیط۔‘‘                    (فتاویٰ عالمگیری ،ج:۱،ص:۲۰۷، ط:دارالفکر)
۶:-حاملہ اور مرضعہ (دودھ پلانے والی عورت) پر بھی روزہ رکھنا فرض ہے، روزہ رکھ سکتی ہیں، البتہ اگر حاملہ یا مرضعہ کو اگر کوئی ایسی نوبت پیش آجائے کہ اس سے اپنی جان یا بچے کی جان کا ڈر ہے تو روزہ توڑنا نہ صرف جائز ہے، بلکہ بہتر ہے۔ الغرض روزہ رکھیں،دودھ پلانے یا کسی اور عذر سے روزہ نہ رکھ سکیں تو آئندہ قضاء لازم ہے۔
’’فتاویٰ تاتارخانیہ ‘‘ میں ہے:
’’(وللحامل والمرضع إذا خافتا علی الولد أو النفس) أی لہما الفطر دفعاً للحرج ولقولہٖ علیہ السلام إن اللّٰہ وضع عن المسافر الصوم وشطر الصلاۃ وعن الحامل والمرضع الصوم۔‘‘        (فتاویٰ تاتارخانیہ ،ج:۲،ص:۳۸۴، ط:ادارۃ القرآن)
واضح رہے کہ روزے کے دوران بچوں کو دودھ پلانے سے روزہ فاسد نہیں ہوتا، کیونکہ دودھ پلانے سے کوئی چیز اندر نہیں جاتی، بلکہ باہر آتی ہے، باہر آنے سے روزہ فاسد نہیں ہوتا۔
’’البحر الرائق ‘‘ میں ہے:
’’لقولہٖ علیہ السلام: الفطر مما دخل ولیس مما خرج، رواہ أبو یعلٰی فی مسندہٖ۔‘‘                                                    (البحر الرائق ،ج:۲،ص:۲۷۸، ط:سعید)
     الجواب صحیح         الجواب صحیح       الجواب صحیح                    کتبہ
   ابوبکرسعید الرحمن    محمد انعام الحق    محمد شفیق عارف                 محمد یوسف
                                                                 تخصصِ فقہِ اسلامی
                                                   جامعہ علوم اسلامیہ علامہ بنوری ٹاؤن کراچی
 

تلاشں

شکریہ

آپ کا پیغام موصول ہوگیا ہے. ہم آپ سے جلد ہی رابطہ کرلیں گے

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئے