بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 22 اکتوبر 2019 ء

بینات

 
 

غیر مسلم کے تہوار میں شرکت حکم!


غیر مسلم کے تہوار میں شرکت حکم!


کیا فرماتے ہیں مفتیان کرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ:

میری جیٹھانی عیسائی ہیں، مگر ان کے ہمارے ساتھ بہت اچھے تعلقات ہیں۔ رمضان میں وہ ہمیں افطار پر بلاتی ہیں اور عید بھی ہمارے ساتھ مناتی ہیں۔ اسی طرح ہم بھی ہرسال کرسمس پر ان کے یہاں انوائٹڈ(مدعو) ہوتے ہیں اور چوبیس اور پچیس دسمبر کی تقاریب میں ہم ان کے ساتھ ہوتے ہیں، کھانا البتہ ان کا حلال ہوتا ہے، مگر کچھ عرصہ ہوا، میرے نندوئی کو کسی نے بتایا کہ کرسمس پر ہمارا اُن کے یہاں جانا درست نہیں، خواہ کھانا حلال ہی ہو، جس پر میری جیٹھانی ناراض ہوگئیں اور انہوں نے کہا کہ پھر وہ ہمارے تہوار پر ہمارے گھر نہیں آئیںگی۔

کیا اتنے قریبی رشتے داروں کو چھوڑدینا چاہیے؟ ہمارے ان کے ساتھ سالوں پرانے تعلقات ہیں اور اس طرح اچانک اُنہیں چھوڑ دینے سے ہمارے ان کے تعلقات خراب ہوسکتے ہیں ، کیا صلہ رحمی کے لحاظ سے ہمیں ان کے ساتھ رابطہ بحال رکھنے کے لیے ان کے مذہبی تہوار کی تقریب میں شریک ہوجانے کی اجازت ہے؟ تحریری جواب سے ممنون فرمائیں۔جزاکم اللّٰہ 

   مستفتی:        عتیق الرحمن        فتویٰ نمبر:        ۴۸۷۷                   تاریخ آمد:     ۱۷-۶-۱۴۳۹ھ        تاریخ واپسی:     ۱-۷-۱۴۳۹ھ
 

الجواب باسمہٖ تعالٰی
 

   صورتِ مسئولہ میں سائلہ کے لیے صلہ رحمی کی غرض سے جیٹھانی کے گھر میں منعقد کرسمس کی تقریب میں شرکت کرنا جائز نہیں۔ سائلہ کو چاہیے کہ وہ حکمت وبصیرت سے اپنی جیٹھانی کو اپنی مجبوری بتائے، تاکہ تعلقات خراب نہ ہوں۔فتاویٰ شامی میں ہے:
’’(والإعطاء باسم النیروز و المہرجان لایجوز) أي الہدایا باسم ہٰذین الیومین حرام (وإن قصد تعظیمہ) کما یعظمہ المشرکون (یکفر) قال أبو حفص الکبیر: لو أن رجلا عبد اللّٰہ خمسین سنۃ ثم أہدي لمشرک یوم النیروز بیضۃ یرید تعظیم الیوم فقد کفر وحبط عملہ الخ۔۔۔۔۔۔ ولو أہدی لمسلم ولم یرد تعظیم الیوم ، بل جرٰی علی عادۃ الناس لایکفر ، وینبغی أن یفعلہٗ قبلہٗ أو بعدہٗ نفیا للشبہۃ ، ولو شری فیہ ما لم یشترہ قبل إن أراد تعظیمہٗ کفر وإن أراد الأکل کالشرب والتنعیم لایکفر۔
وفی الرد: قال فی جامع الفصولین وہٰذا بخلاف ما لو اتخذ مجوسي دعوۃ لحلق رأس ولدہٖ فحضرمسلم دعوتہ فأہدی إلیہ شیئًا لایکفر ، وحکي أن واحدا من مجوسي سربل کان کثیر المال حسن التعہد بالمسلمین ، فاتخذ دعوۃ لحلق راس ولدہٖ فشہد دعوتہ کثیر من المسلمین وأہدی بعضہم إلیہ فشق ذٰلک علی مفتیہم ، فکتب إلٰی أستاذہ علي السعدي أن أدرک أہل بلدک ، فقد ارتدوا وشہدوا شعار المجوسي وقص علیہ القصۃ ، فکتب إلیہ أن إجابۃ دعوۃ أہل الذمۃ مطلقۃ فی الشرع ، ومجازاۃ الإحسان من المروء ۃ ، وحلق الرأس لیس من شعار أہل الضلالۃ ، والحکم بردۃ المسلم بہذا القدر لایمکن ، والأولٰی للمسلمین أن لا یوافقوہم علی مثل ہذہ الأحوال لإظہار الفرح والسرور الخ
۔‘‘                           (رد المحتار مع الدر المختار ۶؍۷۵۴،ط:سعید)
                                                                                                                                                                                                                                                                                      فقط واللہ اعلم
                                                                                                                                                                                                                                                   الجواب صحیح            الجواب صحیح                                       کتبہ
                                                                                                                                                                                                                                           ابوبکرسعید الرحمن        محمد انعام الحق                      محمد عمران ممتاز
                                                                                                                                                                                                                                                                                                              دارالافتاء جامعہ علوم اسلامیہ علامہ بنوری ٹاؤن کراچی 
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                      ۱-۷-۱۴۳۹ھ

تلاشں

شکریہ

آپ کا پیغام موصول ہوگیا ہے. ہم آپ سے جلد ہی رابطہ کرلیں گے

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے