بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 18 ستمبر 2019 ء

بینات

 
 

شرعی عائلی احکام کی دفعہ بندی: قانونِ حضانت        (پانچویں قسط)

شرعی عائلی احکام کی دفعہ بندی:

قانونِ حضانت        (پانچویں قسط)

 

دفعہ۸۔ذوی الارحام کا حقِ حضانت:

(۱)     دفعہ۴،۵،۶اور۷ میں مذکورمستحقینِ حضانت کی عدم موجودگی یا غیر آمادگی یا عدمِ اہلیت کی صورت میں پرورش کا حق درج ذیل ترتیب کے مطابق ذوی الارحام کوہوگا: 
    الف۔     ماں کا باپ        ب۔    اخیافی بھائی 
    ج۔    اخیافی بھائی کا بیٹا         د۔    ماں کا چچا
    ھ۔    حقیقی ماموں         و۔    پدری ماموں 
    ز۔    مادری ماموں
(۲)    ذوی الارحام ’’الأقرب فالأقرب‘‘ کے اصول کے تحت حضانت کے حق دار ہوں گے۔
(۳)    اگر ایک ہی درجہ میں ایک سے زائدمستحق حضانت اشخاص جمع ہوجائیں اورسب ہی اہل اورپرورش کے خواہاں     ہو توجو زیادہ بہتر و مناسب ہو وہ مقدم ہوگا پھر جو زیادہ پرہیزگار ہو پھر جو زیادہ عمر رسیدہ ہو ۔
(۴)     چچازاد،پھوپھی زاد،ماموں زاد اور خالہ زاد بہنوں کو حق حضانت حاصل نہ ہوگا، خواہ زیرحضانت اورحاضنہ کی جنس ایک ہویامختلف ۔
(۵)    ذوی الارحام سے مراد یہ ہے کہ جو:
        الف۔     عصبہ نہ ہوں        ب۔    ذی رحم ہوں 
        ج۔    محرم ہوں 

دفعہ۹۔پرورش کنندہ کی اہلیت: 

(۱)پرورش کنندہ ماں ہو یا اس کی کوئی عزیزہ یاکوئی مرد ہو، لازم ہے کہ درج ذیل صفات کا حامل ہو: 
    الف :     آزاد ہو            ب:     عاقل ہو 
    ج:     بالغ ہو            د:     قابل اعتماد ہو
    ھ:     پرورش پر قدرت رکھتا ہو
    و:     ایسے فسق میں مبتلا نہ ہو جس کے سبب بچے کے ضیاع کا اندیشہ ہو
     ز:    بچہ کا ذی رحم محرم ہو۔ 
(۲)پرورش کنندہ عورت ہو تو مزید شرط ہو گا کہ :
    الف :     بچے کے غیر ذی رحم محرم سے نکاح نہ کرلے یاایسے شخص کے نکاح میں نہ ہو۔
    ب:     خود بچے کی ذو رحم محرم ہو ۔
    ج:     بچے کو زیر پرورش لینے پر آمادہ ہو ۔
    د:     بچے کو نفرت والے ماحول میں نہ رکھے ۔
    ھ:     مرتدہ نہ ہو۔
        و:     قانون ہذا کے احکام کے تحت بچے کی مفت پرورش سے انکار نہ کرتی ہو     جب کہ کوئی اور حضانت کا اہل رضاکارانہ پرورش پر آمادہ ہو۔
        ز:    قانون ہذا کے احکام کے تحت بچے کوولی کی مرضی کے خلاف دورمنتقل نہ     کیا ہو۔
 (۳) پرورش کنندہ عصبہ ہو توشرط ہوگا کہ: 
      اس کا اور بچے کا دین ایک ہو ۔
توضیح ۱۔اگر پرورش کنندہ مکاتبہ ہو تو اسے معاہدہ کتابت کے بعدپیدا ہونے والے بچہ کا حق پرورش حاصل ہوگا ۔
توضیح۲۔ اگر پرورش کنندہ مراہق ہو تو اسے حق حضانت حاصل ہوگا بشرطیکہ وہ مراہقت کا دعوی بھی کرتا ہو۔
توضیح ۳۔عصبہ میں سے چچازاد کو باوجود عدم محرمیت کے لڑکے کی پرورش کا حق ہوگاتاہم غیر محرم عصبہ کو بچی کی پرورش کا حق نہ ہوگاالایہ کہ دیگر اہل اشخاص کی عدم موجودگی یا عدم رضامندی یا عدم اہلیت کی بنا پر عدالت اسے موزوں تصور کرے۔
توضیح۴۔ اگر مستحق حضانت درج بالاشرائط میں سے کوئی ایک شرط بھی کھو دے تو اس کاحق حضانت ساقط ہوجاتا ہے۔                                                                 (جاری ہے)
 

تلاشں

شکریہ

آپ کا پیغام موصول ہوگیا ہے. ہم آپ سے جلد ہی رابطہ کرلیں گے

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئے