بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 17 جنوری 2019 ء

بینات

 
 

سرکاری زمین پر پرانی مساجد کا شرعی حکم!

سرکاری زمین پر پرانی مساجد کا شرعی حکم!


کیا فرماتے ہیں مفتیانِ کرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ:
۱۵ سال سے ایک زمین پر مسجد بنی ہوئی تھی، ۱۵ سال کے بعد زید نے اس کی مرمت کا ارادہ کیا اور وہ چاہتا ہے کہ اس میں باقاعدہ نمازِ جمعہ قائم کی جائے۔ لیکن ایک آدمی نے اس کو کہا کہ: یہ تو مسجد نہیں، یہ زمین ریلوے کی ملکیت ہے، ریلوے والوں نے مسجد کے لیے نہیں دی، لہٰذا آپ کی نماز اس مسجد میں نہیں ہوتی۔ اس پر زید نے تحقیق شروع کی، ریلوے افسروں سے بھی رابطہ ہوا، وہ کہتے ہیں کہ: یہ زمین ریلوے کی ہے، کسی کو کسی تعمیر وغیرہ کی اجازت نہیں ہوگی اور نہ یہ زمین مسجد کے لیے وقف ہوئی۔
واضح رہے کہ حقیقت بھی یہی ہے کہ یہ زمین ریلوے کی ملکیت ہے، لیکن ۱۵ سال سے حکومت نے اس مسجد کے بارے میں نہ پہلے کچھ کہا اور نہ اب کہتے ہیں اور اس مسجد کے قریب جو تعمیرات تھیں وہ ساری حکومت نے مسمار کر دیں ، مگر اس مسجد کو چھوڑ دیا۔ یہ مسجد کوئٹہ کی مرکزی ہسپتال (بی ایم سی) کے سامنے عمومی سڑک پر ہے۔ اب سوال یہ ہے کہ حکومت کا مسجد کو چھوڑدینا دلالۃً اجازت نہیں؟ اور اگر یہ اجازت نہیں تو اَب سرکاری اداروں میں سے کونسے ادارہ سے اجازت لینا شرعاً درست ہے؟ بالفرض اگر اس ادارہ نے اجازت نہیں دی تو پھر یہ مسجد‘ شرعی مسجد ہے یا نہیں؟ اور اگر نہیں تو ہماری سابقہ اور آئندہ نمازوں کا کیا حکم ہے؟ 
 مستفتی:        محمد ابراہیم        فتویٰ نمبر:        ۸۷۴۸
تاریخ آمد:      ۱۰-۱۱-۱۴۳۷ھ        تاریخ واپسی:     ۲۶-۱۱-۱۴۳۷ھ
الجواب ومنہ الصدق والصواب
صورتِ مسئولہ میں مذکورہ مسجد شرعی مسجد ہے اور اس کا مسجد ہونا چند وجوہ سے ظاہر ہے:
۱:…۱۵ سال سے اس مسجد کے قیام پر حکومت کا کوئی اعتراض نہ کرنا۔
۲:…مسجد کے قریب تعمیرات منہدم کرکے مسجد کو چھوڑنا۔
۳:…ایک مرتبہ مسجد بننے کے بعد اب ہمیشہ کے لیے وہ مسجد رہے گی اور کسی کو اس کے توڑنے کا اختیار نہیں ہوگا۔
البتہ مذکورہ مسجد میں مزید توسیع کے لیے متعلقہ محکمہ کی اجازت ضروری ہے، ان کی اجازت کے بغیر مزید توسیع درست نہیں۔البحر الرائق میں ہے:
’’أشار بإطلاق قولہٖ ویأذن للناس فی الصلاۃ أنہ لایشترط أن یقول: أذنت فیہ بالصلاۃ جماعۃ أبدًا ، بل الإطلاق کاف ۔۔۔۔۔۔ وقد رأینا ببخارٰی وغیرہا فی دور وسکک فی أزقۃ غیر نافذۃ من غیر شک الأئمۃ والعوام فی کونہا مساجد ۔۔۔۔۔۔ بنی فی فنائہٖ فی الرُّستاق دکانا لأجل الصلاۃ یصلون فیہ بجماعۃ کل وقت ، فلہ حکم المسجد ۔۔۔۔۔۔ الخ۔‘‘         (البحر الرائق ، کتاب الوقف، فصل فی احکام المساجد، ج:۵، ص:۲۴۱-۲۵۰،ط:رشیدیہ)
فتاویٰ شامی میں ہے:
’’(ولوخرب ما حولہٗ واستغنی عنہ یبقی مسجدا عند الإمام والثانی ) أبدا إلٰی قیام الساعۃ ( وبہٖ یفتی ) حاوي القدسي۔‘‘     (فتاویٰ شامی ،کتاب الوقف، مطلب فی وجوب المسجد او غیرہ، ج:۴، ص:۳۵۸، ط:سعید)
۲:-’’وإن بنی للمسلمین کمسجد ونحوہ ۔۔۔ لاینقض۔‘‘ (فتاویٰ شامی، ج:۶، ص:۵۹۳، ط:سعید)                                                                      فقط واللہ اعلم بالصواب
           الجواب صحیح                الجواب صحیح                     کتبہ
          محمد انعام الحق               شعیب عالم                     شیر غنی
                                                               متخصصِ فقہِ اسلامی
                                                     جامعہ علوم اسلامیہ علامہ بنوری ٹاؤن کراچی
                                                               ۲۶-۱۱-۱۴۳۷ھ
 

تلاشں

شکریہ

آپ کا پیغام موصول ہوگیا ہے. ہم آپ سے جلد ہی رابطہ کرلیں گے