بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

21 ذو الحجة 1440ھ- 23 اگست 2019 ء

بینات

 
 

سائٹ پر آن لائن اکاؤنٹ بناکر پیسے کمانے کا حکم

سائٹ پر آن لائن اکاؤنٹ بناکر پیسے کمانے کا حکم


کیا فرماتے ہیں مفتیانِ کرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ:
آج کل انٹرنیٹ پر آن لائن کھاتے کے حوالے سے بہت سی سائٹ ہیں، جن پر اکاؤنٹ بناکر ان کے طریقے سے کام کرکے پیسے کمائے جاسکتے ہیں۔
آن لائن کمانے کے حوالے سے ایک پاکستانی سائٹ ہے: ’’www.paywao.com‘‘ اس کا طریقہ کار یہ ہے کہ پہلے اس میں ’’Email ID ‘‘سے Register ہوں، پھر ۲ ڈالر پے (ادا) کریں گے، تو یہ سائٹ آپ کا اکاؤنٹ Upgrade کرے گی، آپ روزانہ کچھ Adds , Banner , Video  دیکھ کر کچھ پیسے کماسکتے ہیں، مگر وہ پیسے بہت ہی کم ہیں، اس کو مزید بڑھانے کے لیے آپ اس سائٹ کی Publicity کریں اپنے لنک کے ساتھ، تاکہ جو بھی اس میں اپنا اکاؤنٹ کھولے گا میرے لنک کو استعمال کرکے تو وہ آگے جو بھی کام کرے گا تو اس کا کچھ  Profit  یا  Commition مجھے ملے گا۔
جتنے بھی لوگ میرا لنک استعمال کرکے اس میں اکاؤنٹ کھولیں گے اور آگے کام کریں گے تو اس طرح میرا  Profit  بڑھے گا۔
جناب کیا اس طرح کی سائٹ پر کام کرنا اور اس کی Publicity کرنا جائز ہے؟ آپ بھی اسwww.paywao.com کو دیکھ لیں، اور ہماری رہنمائی فرمائیں، آج کل بہت سے لوگ بناتحقیق کے اس طرح کے کام کررہے ہیں ۔
جناب ! آپ حضرات نے بہت سی سائٹ کی تحقیق کی ہوگی، اگر وہ صحیح ہیں تو برائے مہربانی ان سائٹ کا پتہ بتادیں، تاکہ ہمیں انٹرنیٹ پر آن لائن کمانے کے حوالے سے صحیح جگہ سے ہی کام کرنے کا موقع مل جائے۔                                             مستفتی: محمد عمیر، جمشید روڈ، کراچی
الجواب حامدًا ومصلیًا
اس سائٹ کے اس صفحہ پر  https://www.paywao.com/u.php?work جس میں تمام ہدایات درج ہیں، اس سائٹ سے اس پر کام کرکے پیسہ کمانے کا جو طریقہ کار لکھا ہے، اس کا خلاصہ یہ ہے کہ:
نیا شخص اس میں۲ ڈالر دے کر اپنا اکاؤنٹ بناتا ہے، پھر سائٹ کی جانب سے اس کو مختلف ایڈز اور ویڈیوز دیکھنے کے لیے بتائی جاتی ہیں، جس میں اس کو ہر ایڈ دیکھنے کا کچھ معاوضہ دیا جاتا ہے۔ (ان ایڈز کے دیکھنے کا فائدہ یہ ہوتا ہے کہ جن لوگوں نے یہ ایڈ لگائے ہوتے ہیں، ان کو یہ بتایا جاتا ہے کہ آپ کے ایڈ کو اتنے ہزار افراد دیکھ چکے ہیں) یہ ایڈز مختلف چیزوں کے ہوتے ہیں، جس میں خواتین کی تصاویر کو بھی دیکھنا پڑتا ہے۔ اس کمائی کو بڑھانے کے لیے یہ شخص اس سائٹ کی Multi-Level Marketing کے ذریعے پبلسٹی کرتا ہے اور نئے اکاؤنٹ بنواتا ہے ، ہر ایک کے اکاؤنٹ بنانے پر اس کو اس میں سے کمیشن دیا جاتا ہے اور یہ نئے لوگ جن نئے لوگوں کو متعارف کرائیں گے، اس میں سے اس پہلے اکاؤنٹ والے کو بھی حصہ دیا جائے گا۔ اب اگر یہ شخص اپنا یہ کمایا ہوا پیسہ نکلوائے گا تو اس میں سے اس کو دس فیصد رقم سائٹ والوں کو دینی ہوگی۔
اس طریقہ کار پر کام کرکے پیسہ کمانا درج ذیل وجوہات کی بنا پر ناجائز ہے:
۱:-    اس میں ایسے لوگ اشتہارات کو دیکھتے ہیں جن کایہ چیزیں لینے کا کوئی ارادہ ہی نہیں، بائع کو ایسے دیکھنے والوں کی تعداد میں اضافہ دکھانا جو کہ کسی طرح بھی خریدار نہیں، یہ بیچنے والے کے ساتھ ایک قسم کا دھوکہ ہے۔
۲:-    تصویر کسی بھی طرح کی ہو، اس کا دیکھنا جائز نہیں، لہٰذا اس پر جو اُجرت لی جائے گی، وہ بھی جائز نہ ہوگی۔
۳:-    ان اشتہارات میں خواتین کی تصاویر بھی ہوتی ہیں، جن کا دیکھنا بدنظری کی وجہ سے مستقل گناہ ہے۔
۴:-    اس طریق میں جس طریق پر اس سائٹ کی پبلسٹی کی جاتی ہے جس میں پہلے اکاؤنٹ بنانے والے کوہر نئے اکاؤنٹ بنانے والے پر کمیشن ملتا رہتا ہے، جب کہ اس نے اس نئے اکاؤنٹ بنوانے میں کوئی عمل نہیں کیا، اس بغیر کسی کام کے کمیشن لینے کا معاہدہ کرنا اور اس پر اُجرت لینا بھی جائز نہیں۔
۵:-    شریعت میں بلا محنت کی کمائی کی حوصلہ شکنی کی گئی ہے اور اپنی محنت کی کمائی حاصل کرنے کی ترغیب ہے اور اپنے ہاتھ کی کمائی کو افضل کمائی قراردیا ہے۔ حدیث شریف میں ہے:
’’عَنْ سَعِیْدِ بْنِ عُمَیْرِ الْأَنْصَارِيِّؓ، قَالَ: سُئِلَ رَسُوْلُ اللّٰہِ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ أَيُّ الْکَسْبِ أَطْیَبُ؟ قَالَ:’’ عَمَلُ الرَّجُلِ بِیَدِہٖ، وَکُلُّ بَیْعٍ مَّبْرُوْرٍ۔‘‘      (شعب الایمان، ج:۲،ص:۴۳۴)
’’آپ صلی اللہ علیہ وسلم  سے پوچھا گیا کہ سب سے پاکیزہ کمائی کو نسی ہے؟ تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم  س نے فرمایا کہ: آدمی کا خود اپنے ہاتھ سے محنت کرنا اور ہر جائز اور مقبول بیع۔‘‘
’’قولہ: (مبرور) أي مقبول فی الشرع بأن لا یکون فاسدًا، أو عند اللّٰہ بأن یکون مثاباً بہٖ۔‘‘                         (شرح المشکاۃ للطیبی، الکاشف عن حقائق السنن ،ج:۷،ص:۲۱۱۲)
 لہٰذا حلال کمائی کے لیے کسی بھی ایسے طریقے کو اختیار کرنا چاہیے کہ جس میں اپنی محنت شامل ہو، ایسی کمائی زیادہ بابرکت ہوتی ہے:
’’مطلب فی أجرۃ الدلال ،قال فی التتارخانیۃ: وفی الدلال والسمسار یجب أجر المثل ، وما تواضعوا علیہ أن فی کل عشرۃ دنانیر کذا ، فذاک حرام علیہم. وفی الحاوي: سئل محمد بن سلمۃ عن أجرۃ السمسار ، فقال: أرجو أنہٗ لا بأس بہٖ وإن کان فی الأصل فاسدًا لکثرۃ التعامل وکثیر من ہٰذا غیر جائز ، فجوزوہ لحاجۃ الناس إلیہ کدخول الحمام۔‘‘                  (شامی،ج:۶،ص:۶۳)
’’الإجارۃ علی المنافع المحرمۃ کالزنی والنوح والغناء والملاہی محرمۃ وعقدہا باطل لا یستحق بہٖ أجرۃ۔ ولا یجوز استئجار کاتب لیکتب لہٗ غنائً ونوحًا ، لأنہٗ انتفاع بمحرم۔ وقال أبو حنیفۃؒ: یجوز ، ولا یجوز الاستئجار علی حمل الخمر لمن یشربہا ، ولا علی حمل الخنزیر۔‘‘           (الموسوعۃ الفقہیۃ الکویتیۃ،ج:۱، ص:۲۹۰)
                                                          فقط واللہ اعلم
                                                              الجواب صحیح                                                                     الجواب صحیح                                                                 الجواب صحیح                                                                                   کتبہ
                                                         ابوبکر سعید الرحمن                                                           محمد عبدالقادر                                                          رفیق احمد بالاکوٹی                                                                   محمد عمر رفیق 
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                        متخصصِ فقہِ اسلامی 
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                    جامعہ علوم اسلامیہ علامہ بنوری ٹاؤن کراچی

تلاشں

شکریہ

آپ کا پیغام موصول ہوگیا ہے. ہم آپ سے جلد ہی رابطہ کرلیں گے

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئے