بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

21 شوال 1440ھ- 25 جون 2019 ء

بینات

 
 

خطبۂ صدارت ! حضرت شیخ الہندمولانا محمود حسن رحمۃ اللہ علیہ بموقع اجلاسِ تاسیسی مسلم نیشنل یونیورسٹی، علی گڑھ ،۲۹ /اکتوبر ۱۹۲۰ء

 

خطبۂ صدارت ! حضرت شیخ الہندمولانا محمود حسنv بموقع اجلاسِ تاسیسی مسلم نیشنل یونیورسٹی، علی گڑھ ،۲۹ /اکتوبر ۱۹۲۰ء 

پسِ منظر  ’’برطانیہ نے بیسویں صدی کے شروع میں خلافتِ عثمانیہ ترکی کو کمزور اور پھر ختم کرنے کی خوفناک سازشیں شروع کردی تھیں ، جب اس کے آثارِ بد ظاہر ہونا شروع ہوئے تو متحدہ ہندوستان میں خلافت کی حمایت میں تحریکِ خلافت اور اس کو مؤثر بنانے کے لیے انگریزوں کے خلاف تحریکِ ترکِ موالات شروع ہوئی۔ حضرت شیخ الہندv جون ۱۹۲۰ء میں جب مالٹا کی اسارت سے رہا ہوکر ہندوستان پہنچے توآپ نے اس تحریک کی حمایت میں فتویٰ دیا، فتویٰ نقشِ حیات جلد دوم صفحہ نمبر: ۶۷۴ پر ہے، انہی ایام میں حضرت مولانا مفتی محمد کفایت اللہ صاحب دہلویv کی تحریک پر خلافت کمیٹی نے آپ کو ’’شیخ الہند‘‘ کاخطاب دیا ، ماشاء اللہ! اس کے بعد تو یہ مبارک لقب آپ کی پہچان ہی بن گیا۔  سرسید مسلم یونیورسٹی علی گڑھ اُس وقت انگریزوں کی مکمل حمایت میں تھی، مگر اسی یونیورسٹی میں مولانا محمد علی جوہرؒ اور ان کے ہمنوائوںکی قیادت میں ایک طبقہ انگریزکی غلامی سے بیزار تھا ،اس نے تحریکِ خلافت میں بھرپور حصہ لیا اور مسلم یونیورسٹی علی گڑھ کی اعلیٰ قیادت سے حضرت شیخ الہندvکے فتوے کی بنیاد پر تحریکِ ترکِ موالات کی حمایت کا مطالبہ کیا، مگر فرنگی کی پروردہ یونیورسٹی کی انتظامیہ نے اس سے انکار کردیا، یہ اختلاف یہاں تک بڑھا کہ مولانا جوہرؒ کی قیادت میں مسلم یونیورسٹی علی گڑھ کے اس انگریز دشمن طبقہ نے انگریز کے اثرات سے پاک متوازی طورپر ’’مسلم نیشنل یونیورسٹی علی گڑھ‘‘ کے قیام کا فیصلہ کیا اوراس کے تاسیسی اجلاس کی صدارت کے لیے حضرت شیخ الہندv کو دعوت دی۔ آپؒ نے باوجود علالت ونقاہت کے یہ کہہ کر دعوت قبول فرمائی کہ ’’اگر میری صدارت سے انگریز کو تکلیف ہوگی تومیں اس جلسے میں ضرور شریک ہوں گا‘‘ چنانچہ آپ علی گڑھ تشریف لے گئے اور صدارت فرمائی۔ خطبۂ صدارت آپ کی طرف سے حضرت مولانا شبیر احمد عثمانیv نے پڑھا۔ حضرت شیخ الہندvاس کے بعد علی گڑھ سے دہلی تشریف لے گئے اور ایک ماہ بعد دارِ فانی سے کوچ کرگئے ،  إنا للّٰہ  و إنا إلیہ راجعون۔ واضح ہو کہ اس نئی مسلم نیشنل یونیورسٹی کے چانسلر حکیم محمد اجمل خاں v اور وائس چانسلر مولانا محمد علی جوہرvبنائے گئے، بعد میں مولانا ابو الکلام آزادv نے اس کا نام ’’جامعہ ملیہ اسلامیہ ‘‘ تجویز کیا اور پھر یہ اسی نام ہی سے معروف و مشہور ہوئی۔ اسی مناسبت سے بہت سے مقامات پر حضرت شیخ الہندvکے ذیل کے خطبۂ صدارت کی نسبت ’’جامعہ ملیہ اسلامیہ‘‘ کی تاسیس کی طرف کردی گئی ہے ۔ ۱۹۲۵ء میں یہ نئی یونیورسٹی‘ علی گڑھ سے دہلی منتقل ہوگئی ۔ یہ تفصیل ہم نے اس لیے ذکر کی کہ علی گڑھ یونیورسٹی کا نام آتے ہی ذہن فوراً سرسید کی قائم کردہ یونیورسٹی کی جانب جاتاہے اور ساتھ ہی یہ کہ حضرت شیخ الہندvکی میزبان یہی سرسید مسلم یونیورسٹی علی گڑھ تھی، حالانکہ ایسا ہرگز نہیں،بلکہ حضرت شیخ الہندv تو سرسید یونیورسٹی کے باغیوں کی سرپرستی اور ان کی نئی یونیورسٹی کی تاسیس کے لیے گئے تھے اور یہی لوگ حضرتؒ کے میزبان تھے۔ لیکن بہرحال یہ بھی ایک حقیقت ہے کہ اس نئی مسلم نیشنل یونیورسٹی میں مولانا محمد علی جوہرؒ کے ساتھ جو طبقہ تھا وہ بھی اصلاً سرسید یونیورسٹی علی گڑھ ہی سے تھا، اس لیے یہ کہنا بے جا نہ ہوگا کہ حضرت شیخ الہندv نے جذبۂ حریت وسیاستِ شرعیہ کے اعتبار سے دیوبند اور علی گڑھ میں سیاسی قبلہ کی وحدت پیدا کردی تھی ، جس کے نتیجہ میں جدیدطبقہ کی ایک تعداد نے تحریکِ آزادی میں بھرپور حصہ لیا اور علماء کے قرب کی وجہ سے بہت سے ’’مسٹر‘‘ ’’مولانا‘‘ بن گئے۔ تفصیل ’’علمائے حق‘‘ جلداول اور ’’نقشِ حیات‘‘ جلددوم کے آخر میں ملاحظہ کریں۔ یہ خطبۂ صدارت ’’علمائے حق‘‘ جلد اول، صفحہ نمبر: ۳۷۱ میں ہے ۔ واضح رہے کہ کتاب ’’علمائے ہندکاشاندارماضی‘‘ کی پانچویں وچھٹی جلد ہی ’’علمائے حق اور ان کے مجاہدانہ کارنامے حصہ اول و دوم ‘‘ سے معروف ہے ۔ قارئین محسوس کریں گے کہ آج تقریباً صدی بعد بھی حضرت شیخ الہندv کے ارشادات مخلصین کے لیے رہبر وراہنما ہیں کہ باطل کی سرکوبی اور حق کی سربلندی کے لیے اخلاص وتقویٰ کے ساتھ اجتماعیت، شجاعت و حکمت کا ہونا بھی ضروری ہے، محمد عابد عفی عنہ۔ خطبۂ صدارت     ’’حامدا ومصلیاً:  اما بعد ! جلسوں کی عام روش کا اقتضا یہ ہے کہ میں سب سے پہلے اس عزتِ صدارت پر، جو ایک نہایت ہی سرفروشانہ ایثار وشجاعانہ جدوجہد کرنے والی جماعت کی طرف سے مجھ کو مرحمت ہوئی ہے، شکرگزاری اور منت پذیری کا اظہار کروں، لیکن میں سمجھتا ہوں کہ یہ شکریہ چند وقیع اور شاندار الفاظ سے ادا نہیں ہوسکتا اور نہ مجھ کو محض رسمی اور مصنوعی ممنونیت کی نمائش اس بھاری ذمہ داری کے بوجھ سے سبکدوش کرسکتی ہے جو فی الحقیقت آپ نے اس عزت افزائی کے ضمن میں مجھ پر عائد کی ہے ، دو چار پھڑکتے ہوئے جملے بلاشبہ عارضی طورپر مجلس کو محظوظ کرسکتے ہیں، مگر میں خیال کرتا ہوں کہ میری قوم اس وقت فصاحت وبلاغت کی بھوکی نہیں ہے اور نہ اس قسم کی عارضی مسرتوں سے اس کے درد کا اصلی درمان ہوسکتا ہے۔ اس کے لیے ضرورت ہے ایک قائم ودائم جوش کی، نہایت صابرانہ ثبات قدم کی، دلیرانہ مگر عاقلانہ طریق عمل کی اور اپنے نفس پر پورا قابو پانے کی۔ غرض ایک پختہ کاربلند خیال اور ذی ہوش محمدی بننے کی۔     میں ہرگز آپ کے لیکچراروں اور فصیح اللسان تقریر کرنے والوں کی تحقیر نہیں کرتا ہوں، کیونکہ میں خوب جانتاہوں کہ جو چیز سوئے ہوئے دلوں کا دروازہ کھٹکھٹاتی ہے اور زمانہ کی ’’ہوا‘‘ میں اول تموّج پیدا کرتی ہے وہ یہی دعوتِ حق کا غلغلہ ڈالنے والی زبان ہے ، ہاں! اس قدر گزارش کرتاہوں کہ تاوقتیکہ متکلم اور مخاطب کے دل میں سعی جمیلہ کا سچا جذبہ، اس کے اخلاق میں شجاعانہ استقامت وایثار، اس کے جوارح میں قوتِ عمل، اس کے ارادوں میں پختگی اورچستی نہ ہو، محض گرمجوش تقریریں کسی ایسے کٹھن اور بلند پایہ مقصد میں آپ کو کامیاب نہیں کرسکتیں: و کیف الوصول إلٰی سعاد و دونہا  قلل الجبال و دونہن حتوف     اے حضرات ! آپ خوب جانتے ہیں کہ جس وادیِ پُرخار کو آپ برہنہ پاہوکر قطع کرنا چاہتے ہیں وہ مشکلات اور تکالیف کا جنگل ہے، قدم قدم پر وہاں صعوبتوں کا سامنا ہے، طرح طرح کی بدنی، مالی اور جاہی مکروہات آپ کے دامنِ استقلال کو الجھانا چاہتے ہیں،لیکن حُفَّتِ الْجَنَّۃُ بِالْمَکَارِہِکے قائل کو اگر آپ خدا کا سچا رسول مانتے ہیں (اور ضرور مانتے ہیں) تو یقین رکھیے ! کہ جس صحرائے پُر خار میں آپ گامزن ہونے کا ارادہ رکھتے ہیں اس کے راستہ پر جنت کا دروازہ بہت ہی نزدیک ہے ۔     کامیابی کا آفتاب ہمیشہ مصائب وآلام کی گھٹائوں کو پھاڑ کر نکلا ہے اور اعلیٰ تمنائوں کا چہرہ سخت سے سخت صعوبتوں کے جھرمٹ میں سے دکھائی دیا ہے :  ’’أَمْ حَسِبْتُمْ أَنْ تَدْخُلُوْا الْجَنَّۃَ وَ لَمَّا یَأْتِکُمْ مَّثَلُ الَّذِیْنَ خَلَوْا مِنْ قَبْلِکُمْ مَّسَّتْہُمُ الْبَأْسَآئُ وَ الضَّرَّائُ وَ زُلْزِلُوْا حَتّٰی یَقُوْلَ الرَّسُوْلُ وَ الَّذِیْنَ أٰمَنُوْا مَعَہٗ مَتٰی نَصْرُ اللّٰہِ أَلاَ إِنَّ نَصْرَ اللّٰہِ قَرِیْبٌ۔‘‘                                                         (سورۃ البقرہ :۲۱۴) ’’کیا تم کو خیال ہے کہ تم جنت میں جا گھسوگے اور تمہیں اس طرح کے حالات پیش نہ آئیں گے جو کہ تم سے پہلے لوگوں کو پیش آئے؟ ان کو سختیاں اور اذیتیں پہنچیں اور وہ اس قدر جھڑجھڑائے گئے کہ پیغمبر اور اس کے ساتھ مومنین بول اُٹھے کہ خدا کی مدد کہاں ہے؟ یاد رکھو کہ خدا کی مدد نزدیک ہے۔‘‘ دوسری جگہ ارشا د ہے : ’’ أَمْ حَسِبْتُمْ أَنْ تَدْخُلُوْا الْجَنَّۃَ وَ لَمَّا یَعْلَمِ اللّٰہُ الَّذِیْنَ جَاہَدُوْا مِنْکُمْ وَ یَعْلَمَ الصَّابِرِیْنَ۔‘‘                                                   (سورۃ آل عمران :۱۴۲) ’’کیا تم نے یہ خیال کیا ہے کہ تم جنت میں داخل ہوجائو گے بدون (بغیر) اس کے کہ اللہ جانچ کرے تم میں سے مجاہدین اور صابرین کی ؟۔‘‘     ایک اور مقام پر ارشاد ہواہے : ’’الٓمٓ أَحَسِبَ النَّاسُ أَنْ یُّتْرَکُوْا أَنْ یَّقُوْلُوْا أٰمَنَّا وَ ہُمْ لَا یُفْتَنُوْنَ وَ لَقَدْ فَتَنَّا الَّذِیْنَ مِنْ قَبْلِہِمْ فَلَیَعْلَمَنَّ اللّٰہُ الَّذِیْنَ صَدَقُوْا وَ لَیَعْلَمَنَّ الْکَاذِبِیْنَ۔‘‘             (سورۃ العنکبوت :۱-۳)  ’’کیا لوگ یہ سمجھے ہوئے ہیں کہ محض ’’أٰمَنَّا‘‘کہنے پر وہ چھوڑ دیے جائیں گے؟ حالانکہ ہم نے ان سے پہلے لوگوں کی آزمائش کی ہے، تو ضرور ہے کہ اللہ پرکھے گا سچے اور جھوٹے لوگوں کو ۔‘‘     یہ حق تعالیٰ جل شانہ کی سنت مستمرہ ہے جس میں کسی قسم کی تبدیلی وتغیر گو راہ نہیں، کوئی قوم اللہ جل شانہ کی محبت اور اس کے راستے پر چلنے کی مدعی نہیں ہوئی جس کو امتحان وآزمائش کی کسوٹی پر نہ کسا گیا ہو، خدا کے برگزیدہ اور اولوالعزم پیغمبر جن سے زیادہ خدا کا پیار کسی پر نہیں ہوسکتا ، وہ بھی مستثنیٰ نہیں رہے، بیشک ان کو مظفر و منصور کیا گیا ، مگر کب؟! سخت ابتلاء اور زلزالِ شدید کے بعد، وہ خود فرماتے ہیں:  ’’حَتّٰی إِذَا اسْتَیْئَسَ الرُّسُلُ وَ ظَنُّوْا أَنَّہُمْ قَدْ کُذِبُوْا جَائَ ہُمْ نَصْرُنَا فَنُجِّیَ مَنْ نَّشَائُ وَ لَا یُرَدُّ بَأْسُنَا عَنِ الْقَوْمِ الْمُجْرِمِیْنَ ۔‘‘                                  (یوسف :۱۱۰)  پس اے فرزاندانِ توحید! میں چاہتا ہوں کہ آپ انبیاء ومرسلین اور ان کے وارثوں کے راستہ پر چلیں اور جو لڑائی اس وقت شیطان کی ذریت اور خدائے قدوس کے لشکروں میں ہورہی ہے اس میں ہمت نہ ہاریں اور یاد رکھیں کہ شیطان کے مضبوط سے مضبوط آہنی قلعے خداوند قدیر کی امداد کے سامنے تارِ عنکبوت سے بھی زیادہ کمزور ہیں ۔ ’’أَلَّذِیْنَ أٰمَنُوْا یُقَاتِلُوْنَ فِیْ سَبِیْلِ اللّٰہِ وَ الَّذِیْنَ کَفَرُوْا یُقَاتِلُوْنَ فِیْ سَبِیْلِ الطَّاغُوْتِ فَقَاتِلُوْا أَوْلِیَائَ الشَّیْطَانِ إِنَّ کَیْدَ الشَّیْطٰنِ کَانَ ضَعِیْفًا۔‘‘                 (النساء : ۷۶)  ’’ایماندار تو خدا کے راستے میں لڑتے ہیں اور کافر شیطان کے راستہ میں، پس تم شیطان کے مددگاروں سے لڑو، بلاشبہ شیطان کی فریب کاری محض لچر پوچ ہے ۔‘‘     میں نے اس پیرانہ سالی اور علالت ونقاہت کی حالت میں (جس کو آپ خود مشاہدہ فرمارہے ہیں ) آپ کی دعوت پر اس لیے لبیک کہا کہ میں اپنی ایک گم شدہ متاع1کو یہاں پانے کا امیدوار ہوں۔     بہت سے نیک بندے ہیں جن کے چہروں پر نماز کا نور اور ذکر اللہ کی روشنی جھلک رہی ہے، لیکن جب ان سے کہا جاتا ہے کہ خدارا! اُٹھو اور اس امتِ مرحومہ کوکفار کے نرغے سے بچائو ، ان کے دلوں پر خوف وہراس مسلط ہوجاتا ہے، خدا کا نہیں، بلکہ چند ناپاک ہستیوں کا اور ان کے سامانِ حرب وضرب کا، حالانکہ ان کو تو سب سے زیادہ جاننا چاہیے تھا کہ خوف کھانے کے قابل اگر کوئی چیز ہے تو وہ خدا کا غضب اور اس کا قاہرانہ انتقام ہے اور دنیا کی متاعِ قلیل خدا کی رحمتوں اور اس کے انعامات کے مقابلے میں کوئی حقیقت نہیں رکھتی، چنانچہ اس قسم کے مضمون کی طرف حق تعالیٰ جل شانہ نے ان آیات میں ارشاد فرمایا ہے: ’’أَلَمْ تَرَ إِلٰی الَّذِیْنَ قِیْلَ لَہُمْ کُفُّوْا أَیْدِیَکُمْ وَ أَقِیْمُوْا الصَّلٰوۃَ وَ أٰتُوْا الزَّکٰوۃَ فَلَمَّا کُتِبَ عَلَیْہِمُ الْقِتَالُ إِذَا فَرِیْقٌ مِّنْہُمْ یَخْشَوْنَ النَّاسَ کَخَشْیَۃِ اللّٰہِ أَوْ أَشَدَّ خَشْیَۃً وَّ قَالُوْا رَبَّنَا لِمَ کَتَبْتَ عَلَیْنَا الْقِتَالَ لَوْ لَا أَخَّرْتَنَا إِلٰی أَجَلٍ قَرِیْبٍ قُلْ مَتَاعُ الدُّنْیَا قَلِیْلٌ وَّ الْأٰخِرَۃُ خَیْرٌ لِّمَنِ اتَّقٰی وَ لَا تُظْلَمُوْنَ فَتِیْلًا أَیْنَمَا تَکُوْنُوْا یُدْرِکْکُّمُ الْمَوْتُ وَ لَوْ کُنْتُمْ فِیْ بُرُوْجٍ مُّشَیَّدَۃٍ ۔‘‘                                             (النسائ:۷۷) ’’کیا تم نے ان لوگوں کی طرف نظر نہیں کی جن سے کہا گیا تھا کہ اپنے ہاتھ روکو اور نماز پڑھتے رہو اور زکوٰۃ دیتے رہو ، پھر جب ان پر جہاد فرض کیا گیا تو یکایک ان میں ایک فریق ڈرنے لگا آدمیوں سے، خدا کے برابر یا اس سے بھی زیادہ اور کہنے لگا : اے ہمارے پروردگار! آپ نے ہم پر جہاد کیوں فرض کیا؟ اور کیوں تھوڑی مدت ہم کو اور مہلت نہ دی ؟ کہہ دو کہ دنیا کا فائدہ تھوڑا ہے اور آخرت اس شخص کے لیے بہتر ہے ، جس نے تقویٰ اختیار کیا اور تم پر ایک تاگے کے برابر بھی ظلم نہیں کیا جائے گا، جہاں کہیں بھی تم ہو موت تم کو آدبائے گی، اگرچہ تم نہایت مستحکم قلعوں میں ہو ۔ ‘‘     اے نونہالانِ وطن! جب میں نے دیکھا کہ میرے اس درد کے غمخوار (جس سے میری ہڈیاں پگھلی جارہی ہیں) مدرسوں، خانقاہوں میں کم اور اسکولوں اور کالجوں میں زیادہ ہیں2 تو میں نے اور میرے چند مخلص احباب نے ایک قدم علی گڑھ کی طرف بڑھایا اور اسی طرح ہم نے ہندوستان کے دوتاریخی مقاموں (دیوبند اور علی گڑھ) کا رشتہ جوڑا ، کچھ بعید نہیں کہ بہت سے نیک نیت بزرگ میرے اس سفر پر نکتہ چینی کریں اور مجھ کو اپنے مرحوم بزرگوں کے مسلک سے منحرف بتائیں، لیکن اہل نظر سمجھتے ہیں کہ جس قدر میں بظاہر علی گڑھ کی طرف آیا ہوںاس سے کہیں زیادہ علی گڑھ 3 میری طرف آیا ہے۔ دوش دیدم کہ ملائک در مے خانہ زدند گلِ آدم بسرشتند و بہ پیمانہ زدند  ساکنانِ حرم سرّ عفاف ملکوت  بہ امن راہ نشیں بادۂ مستانہ زدند  شکر ایزد کہ میان من و او صلح فتاد حوریاں رقص کناں ساغر شکرانہ زدند  جنگ ہفتاد و دو ملت ہمہ را عذر بنہ چوں نہ دیدند حقیقت رہِ افسانہ زدند      آپ میں سے جو حضرات محقق اور باخبر ہیں وہ جانتے ہوں گے کہ میرے اکابر سلف نے کسی وقت بھی کسی اجنبی زبان سے سیکھنے یا دوسری قوموں کے علم وفنون حاصل کرنے پر کفر کا فتویٰ نہیں دیا، ہاں! یہ بے شک کہا گیا کہ اگر انگریزی تعلیم کا آخری اثر یہی ہے جو عموماً دیکھا گیا ہے کہ لوگ نصرانیت کے رنگ میں رنگے جائیں یا ملحدانہ گستاخیوں سے اپنے مذہب اور مذہب والوں کا مذاق اُڑائیں یا ’’حکومتِ وقتیہ‘‘ کی پرستش کرنے لگیں تو ایسی تعلیم پانے سے ایک مسلمان کے لیے جاہل رہنا ہی اچھا ہے، اب از راہِ نوازش آپ ہی انصاف کیجیے کہ یہ تعلیم سے روکنا تھا یا اس کے اثر بد سے اور کیا یہ وہی بات نہیں جس کو آج مسٹر گاندھی اس طرح ادا کررہے ہیں کہ: ’’ ان کالجوں کی اعلیٰ تعلیم بہت اچھی ، صاف اور شفاف دودھ کی طرح ہے جس میں تھوڑا سا زہر ملادیا گیا ہو۔‘‘      باری تعالیٰ کا شکر ہے کہ اس نے میری قوم کے نوجوانوں کوتوفیق دی ہے کہ وہ اپنے نفع وضرر کا موازنہ کریں اور دودھ میں جو زہر ملا ہواہے اس کو کسی ’’بھپکے‘‘ کے ذریعہ سے علیحدہ کرلیں، آج ہم و ہی بھپکا نصب کرنے کے لیے جمع ہوئے ہیں اور آپ نے مجھ سے پہلے سمجھ لیا ہوگا کہ وہ ’’بھپکا‘‘ مسلم نیشنل یونیورسٹی ہے۔     مطلق تعلیم کے فضائل بیان کرنے کی ضرورت اب میری قوم کو نہ رہی، کیونکہ زمانے نے خوب بتلادیا ہے کہ تعلیم سے ہی بلند خیالی اور تدبر اور ہوش مندی کے پودے نشوونما پاتے ہیں اور اس کی روشنی میں آدمی نجاح وفلاح کے راستے پر چل سکتا ہے، ہاں! ضرورت اس کی ہے کہ وہ تعلیم مسلمانوں کے ہاتھوں میں ہو اور اغیار کے اثر سے بالکل آزاد ہو ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ کیا باعتبارِ عقائد وخیالات کے اور کیا باعتبارِ اخلاق واعمال کے اور کیا باعتبارِ اوضاع واطوار کے (ان سب میں) ہم غیروں کے اثرات سے پاک ہوں۔     ہماری عظیم الشان قومیت کا اب یہ فیصلہ نہ ہونا چاہیے کہ ہم اپنے کالجوں سے بہت سستے داموں پر غلام پیدا کرتے رہیں، بلکہ ہمارے کالج نمونہ ہونے چاہئیں بغداد اور قرطبہ کی یونیورسٹیوں اور ان عظیم الشان مدارس کے جنہوں نے یورپ کو اپنا شاگرد بنایا، اس سے بیشتر کہ ہم اس کو اپنا استاد بناتے ۔     آپ نے سنا ہوگا کہ بغداد میں جب مدرسۂ نظامیہ کی بنیاد ایک اسلامی حکومت کے ہاتھوں رکھی گئی ہے تو اس دن علماء نے جمع ہو کر علم کا ماتم کیا تھا کہ افسوس آج سے علم حکومت کے عہدے اور منصب حاصل کرنے کے لیے پڑھاجائے گا۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ تو کیا آپ ایک ایسی یونیورسٹی4سے فلاحِ قومی کی امید رکھ سکتے ہیں جس کی امداد اور نظام میں بڑا زبردست ہاتھ ایک غیر اسلامی حکومت کا ہو ۔     ہماری قوم کے سربرآوردہ لیڈروں نے سچ تو یہ ہے کہ امت ِاسلامیہ کی ایک بڑی اہم ضرورت کا احساس کیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بلاشبہ مسلمانوں کی درسگاہوں میں جہاں علوم عصریہ کی اعلیٰ تعلیم دی جاتی ہو ، اگر طلبہ اپنے اصول وفروع سے بے خبر ہوں اور اپنے قومی محسوسات اور اسلامی فرائض فراموش کردیں اور ان میں اپنی ملت اور اپنے ہم قوموں کی حمیت نہایت ادنیٰ درجہ پر رہ جائے تو یوں سمجھو کہ وہ درسگاہ مسلمانوں کی قوت کوضعیف بنانے کا ایک آلہ ہے، اس لیے اعلان کیا گیا ہے کہ ایک آزاد یونیورسٹی5کا افتتاح کیا جائے گا جوگورنمنٹ کی اعانت اوراس کے اثر سے بالکل علیحدہ اور جس کا تمام تر نظامِ عمل اسلامی اور قومی محسوسات پر مبنی ہو ۔     مجھے ان لیڈروں سے زیادہ ان نونہالانِ وطن کی ہمتِ بلند پر آفرین اور شاباش کہنا چاہیے، جنہوں نے اس مقصد کی انجام دہی کے لیے اپنی ہزاروں امیدوں پر پانی پھیر دیا اور باوجود ہرقسم کے طمع اور خوف کے وہ ’’موالاتِ نصاریٰ کے ترک ‘‘ پر مضبوطی اور استقلال کے ساتھ قائم رہے اور اپنی عزیز زندگیوں کو ملت اور قوم کے نام پر وقف کردیا ۔     شاید ترکِ موالات کے ذکر پر آپ اس مسئلہ کی تحقیق کی طرف متوجہ ہوجائیں اور ان عامۃ الورود سوالات اور شبہات کے دلدل میں پھنسنے لگیں جو اس بہت ہی اہم واعظم مسئلے کے متعلق آج کل عموماً زبان زد ہیں، اس لیے میں آپ سے اجازت چاہتاہوں کہ آپ تھوڑا سا وقت مجھ کو اس تحریر کے سنانے کے لیے عنایت فرمائیں جو میں نے بعض مسائل دریافت کیے جانے پر دیوبند سے تیار کرکے بھیجی تھی۔6     اب میری یہ التجا ہے کہ آپ سب حضرات بارگاہِ رب العزت میں نہایت صدقِ دل سے دعاکریں کہ وہ ہماری قوم کو رسوا نہ کرے اور ہم کوکافروں کا تختہ مشق نہ بنائے اور ہمارے اچھے کاموں میں ہماری مدد فرمائیں ۔ و آخر دعوانا أن الحمد للّٰہ رب العالمین و صلی اللّٰہ علٰی خیر خلقہٖ محمد وآلہٖ وأصحابہٖ أجمعین  آپ کا خیراندیش          محمود عفی عنہ              ۱۶؍ صفر ۱۳۳۹ھ مطابق ۲۹؍اکتوبر ۱۹۲۰ء     حواشی 1۔۔۔۔ حضرت شیخ الہندvکی ’’گم شدہ متاع‘‘ سے مراد شجاعت وجذبۂ حریت اور سیاسی شعور کی بیداری تھی، در اصل آپ ؒ مسلمانوں میں خصوصاً صلحاء وعلماء میں اعمالِ صالحہ کے ساتھ جذبۂ حریت کی سرشاری بھی دیکھنا چاہتے تھے۔ و اللہ تعالیٰ اعلم بالصواب (م،ع) 2۔۔۔۔ اس لیے کہ حضرت شیخ الہند v نے ان لوگوں کی’’ علی برادران‘‘ کی قیادت میں تحریکِ خلافت میں جانثاری ملاحظہ فرمائی تھی ۔ 3۔۔۔۔ اس لیے کہ علی گڑھ کے ان لوگوں نے انگریز کے تسلط سے آزاد یونیورسٹی قائم کرنے کا فیصلہ کیا اور تحریکِ ترکِ موالات میں حصہ لیا ۔ 4۔۔۔۔ یہ اشارہ ہے سرسید یونیورسٹی علی گڑھ کی طرف ۔ 5۔۔۔۔ مراد مسلم نیشنل یونیورسٹی علی گڑھ ہے ، جو بعد میں جامعہ ملیہ اسلامیہ میں تبدیل ہوگئی ۔ 6۔۔۔۔  تحریک ترکِ موالات کے متعلق حضرت اقدس شیخ الہندv کا فتویٰ نقشِ حیات صفحہ: ۶۷۴ جلد دوم میں ملاحظہ فرمائیں ،جس کی تائید بعد میں پانچ سو علماء نے فرمائی تھی ۔

 

 

 

تلاشں

شکریہ

آپ کا پیغام موصول ہوگیا ہے. ہم آپ سے جلد ہی رابطہ کرلیں گے

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئے